پی ٹی آئی نے عمر فاروق کے توشہ خانہ کے تحائف ملنے کے دعوؤں کی تردید کردی

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما بدھ کے روز جارحانہ انداز میں تھے جب انہوں نے دبئی میں مقیم تاجر عمر فاروق ظہور کے معزول وزیر اعظم عمران خان کو اپنے دور حکومت میں دیے گئے توشہ خانہ کے تحائف خریدنے کے دعووں پر تنقید کی۔

سابق وزیر اعظم عمران خان کے خلاف توشہ خانہ کے غلط استعمال کے الزامات نے ایک روز قبل ہی ظہور کے منظر عام پر آنے کے بعد ایک غیر معمولی موڑ اختیار کیا اور دعویٰ کیا کہ انہوں نے کچھ سرکاری تحائف خریدے ہیں جن میں کم از کم قیمت کی ایک مہنگی گراف کلائی گھڑی بھی شامل ہے۔ فرح گوگی اور شہزاد اکبر سے 2 ارب روپے۔

نجی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے ظہور کا کہنا تھا کہ انہوں نے پی ٹی آئی کے سربراہ کو سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کی جانب سے تحفے میں دی گئی قیمتی اشیاء 20 لاکھ ڈالر میں خریدی تھیں۔

انہوں نے مزید الزام لگایا تھا کہ سابق وزیراعظم کے مشیر برائے احتساب شہزاد اکبر نے 2019 میں ان سے گھڑیاں، انگوٹھیاں اور دیگر تحائف فروخت کرنے کے لیے رابطہ کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ان کے پاس ان دعووں کی تصدیق کے ثبوت بھی ہیں جو وہ کر رہے ہیں۔

تاجر نے الزام لگایا کہ بعد میں اسے بلیک میل کیا گیا اور اکبر کے کہنے پر وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) نے ان کے خلاف منی لانڈرنگ کے جعلی مقدمات درج کیے جب اس نے اپنی سابقہ ​​اہلیہ صوفیہ مرزا کے مطالبات ماننے سے انکار کیا۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ "فرح خان خود دبئی میں میرے دفتر میں تحائف لے کر آئیں اور مجھے بتایا کہ یہ اشیا عمران خان کو سعودی ولی عہد نے تحفے میں دی ہیں،” انہوں نے دعویٰ کیا کہ وہ اپنے ذرائع سے تصدیق کرنے کے بعد انہیں خریدنے کے لیے قائل ہوگئیں۔

پی ٹی آئی کے رہنما فواد چوہدری، شیریں مزاری اور زلفی بخاری نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ظہور کے دعوؤں کی مذمت کی اور زور دے کر کہا کہ پی ٹی آئی کے سربراہ کی جانب سے کوئی بدتمیزی نہیں ہوئی۔

اس موقع پر شیریں مزاری نے یہ سوال بھی کیا کہ عمران کی اتنی سخت جانچ پڑتال کیوں کی گئی جب کہ دیگر سیاسی رہنماؤں اور سرکاری ملازمین کے توشہ خانہ کی تفصیلات کی تحقیقات نہیں کی گئیں۔

"میرا سوال یہ ہے کہ کیا فوجی رہنماؤں کو سرکاری دوروں پر جانے پر ملنے والے تحائف کا کوئی ریکارڈ موجود ہے،” انہوں نے زور دیا۔

اردو پوائنٹ 2

اردو پوائنٹ 2 پاکستان کو بہترین نیوز پبلیشر سنٹر یے۔ یہاں آپ پاکستانی خبریں، انٹرنیشنل خبریں، ٹیکنالوجی، شوبز، اسلام، سیاست، اور بھی بہیت کہچھ پڑھ سکتے ہیں۔

مزیز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button