آرمی چیف کی تقرری پر وزیراعظم کے مشورے پر عمل کریں گے، صدر علوی

صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی۔  — اے ایف پی/فائل
صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی۔ — اے ایف پی/فائل

اسلام آباد: صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے جمعہ کے روز کہا کہ وزیر اعظم شہباز شریف کی تقرری کے حوالے سے دی گئی ہدایات پر عمل کریں گے۔ اگلے چیف آف آرمی سٹاف (COAS)، جیو نیوز ذرائع کے حوالے سے اطلاع دی گئی۔

صدر نے نئے آرمی چیف کی تقرری کے حوالے سے اپنے معاونین کے ساتھ بات چیت میں مبینہ طور پر کہا کہ وہ بہت انتظار کے عمل میں رکاوٹیں پیدا نہیں کر سکتے۔

پی ٹی آئی کے ایک رہنما صدر علوی نے زور دیتے ہوئے کہا، "میرے پاس وزیر اعظم کے مشورے کو روکنے کا قانونی اختیار نہیں ہے؛ میں نے کبھی بھی ریاست کے معاملات میں مداخلت نہیں کی۔”

یہ بیان ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب موجودہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اس ماہ کے آخر میں ریٹائر ہونے والے ہیں اور انہوں نے اپنی مدت ملازمت میں توسیع کو مسترد کر دیا ہے اور اسی طرح فوج نے بھی۔

اس کے جواب میں پی ٹی آئی کے نائب صدر فواد چوہدری نے کہا کہ صدر جب اہم تقرری کی بات کرتے ہیں تو اپنا آئینی فرض پورا کریں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں واضح کر دوں کہ صدر جو بھی فیصلہ کریں گے اسے عمران خان کی مکمل حمایت حاصل ہو گی۔

مشاورت

حکمران شراکت داروں سے مشاورت سے قبل وزیراعظم شہباز شریف نے اپنے بھائی سے رابطہ کیا، مسلم لیگ ن کے قائد نواز شریف فیصلے کے بارے میں. لندن میں ہونے والی ملاقات میں دونوں رہنماؤں نے فوج کے سینئر ترین افسر کو اگلا آرمی چیف مقرر کرنے پر اتفاق کیا۔

گزشتہ ہفتے لندن کے دورے کے بعد جب وہ پاکستان پہنچے تو وزیر اعظم بیمار ہو گئے، لیکن انہوں نے شروع کر دیا ہے۔ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ سے مشاورت (PDM) قائدین مائشٹھیت سلاٹ کے لیے۔

ذرائع نے آن لائن نیوز ایجنسی کو بتایا کہ اتحادی جماعتوں نے وزیراعظم کو طے شدہ طریقہ کار اور روایات کے مطابق تقرری کرنے کا مکمل حکم دیا ہے۔

ان کے مطابق پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے وزیراعظم کو ٹیلی فون کرکے ان کی خیریت دریافت کی۔ ٹیلی فونک گفتگو کے دوران دونوں رہنماؤں نے ملکی صورتحال اور نئے آرمی چیف کی تقرری پر تبادلہ خیال کیا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ فضل نے اپنا وزن وزیر اعظم شہباز کے پیچھے ڈال دیا اور کہا کہ وہ طے شدہ طریقہ کار کے مطابق نئے آرمی چیف کی تقرری کریں۔

ذرائع نے بتایا کہ حکمران اتحاد کے رہنماؤں کی اکثریت نے آرمی چیف کی تقرری کو وزیر اعظم کا انتظامی اور صوابدیدی اختیار قرار دیا۔

پیپلز پارٹی اور جے یو آئی (ف) کی قیادت نے وزیر اعظم شہباز شریف کو ان کی خواہش کے مطابق نئے آرمی چیف کی تقرری کا مکمل اختیار دیا۔

اردو پوائنٹ 2

اردو پوائنٹ 2 پاکستان کو بہترین نیوز پبلیشر سنٹر یے۔ یہاں آپ پاکستانی خبریں، انٹرنیشنل خبریں، ٹیکنالوجی، شوبز، اسلام، سیاست، اور بھی بہیت کہچھ پڑھ سکتے ہیں۔

مزیز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button