مفتی اعظم پاکستان مولانا رفیع عثمانی 86 سال کی عمر میں انتقال کر گئے۔

پاکستان کے مفتی اعظم مولانا مفتی محمد رفیع عثمانی۔  — Twitter/@saadsami007/file
پاکستان کے مفتی اعظم مولانا مفتی محمد رفیع عثمانی۔ — Twitter/@saadsami007/file

کراچی: مفتی اعظم پاکستان اور بزرگ عالم دین مولانا رفیع عثمانی جمعہ کو 86 برس کی عمر میں صوبائی دارالحکومت میں انتقال کر گئے۔

مولانا رفیع عثمانی اسلامی یونیورسٹی کے نائب صدر مولانا مفتی تقی عثمانی کے بڑے بھائی اور پاکستان کے سابق عظیم الشان مفتی شفیع عثمانی کے صاحبزادے تھے۔ جامعہ دارالعلوم کراچی کے صدر تھے۔

عثمانی 21 جولائی 1936 کو متحدہ ہندوستان کے شہر دیوبند میں پیدا ہوئے۔ وہ وفاق المدارس العربیہ، پاکستان کے سرپرست بھی تھے۔

ملک کے عظیم مفتی اعظم کی وفات پر تعزیت کا سلسلہ شروع ہو گیا صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے عالم کی دینی اور علمی خدمات کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے ان کے غم کا اظہار کیا۔

مفتی رفیع عثمانی نے فقہ، حدیث اور تفسیر کے میدان میں گراں قدر خدمات انجام دیں۔ ان کی مذہبی اور علمی خدمات، اور مذہبی علم کے فروغ کے لیے خدمات، "صدر نے کہا۔

وزیر اعظم شہباز شریف نے بھی مفتی اعظم کے انتقال پر تعزیت کا اظہار کیا۔

مفتی رفیع عثمانی کی زندگی اسلام کی تبلیغ و ترویج کے لیے وقف تھی۔ ان کی سماجی اور مذہبی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا،” وزیر اعظم شہباز نے مزید کہا کہ عالم اسلام نے مسلمانوں کے اتحاد کے لیے اپنی گراں قدر خدمات سرانجام دیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ اللہ تعالیٰ مرحوم کو جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور لواحقین کو صبر جمیل عطا فرمائے۔

اپنے ٹوئٹر ہینڈل پر وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے لکھا کہ مفتی رفیع عثمانی کی اسلام اور پاکستان کے لیے خدمات "مثالی” ہیں۔

دریں اثناء وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب نے بھی عالم اسلام کے انتقال پر دکھ کا اظہار کیا۔

مفتی رفیع عثمانی کی وفات ایک ناقابل تلافی نقصان ہے۔ مرحوم کی مذہبی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔‘‘

سندھ کے گورنر کامران ٹیسوری نے بھی ان کے اہل خانہ سے اظہار تعزیت کیا۔

گورنر نے ٹویٹر پر اپنے تعزیتی پیغام میں کہا کہ "یہ نہ صرف پاکستان بلکہ عالم اسلام کے لیے ایک بہت بڑا نقصان ہے۔ مذہبی تعلیم کے فروغ میں مفتی صاحب کی خدمات بے مثال ہیں۔”

ٹیسوری نے مزید کہا کہ مفتی رفیع عثمانی کی وفات سے پیدا ہونے والا خلا زیادہ دیر تک پر نہیں ہو سکے گا۔

وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے بھی ممتاز عالم دین کے انتقال پر دکھ کا اظہار کیا۔

وزیراعلیٰ مراد نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مفتی صاحب کی وفات عالم اسلام کے لیے ایک بڑا سانحہ ہے، ان کی دینی خدمات لازوال ہیں۔

وزیراعلیٰ نے مفتی رفیع عثمانی کے لیے جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام کی دعا کی۔

اردو پوائنٹ 2

اردو پوائنٹ 2 پاکستان کو بہترین نیوز پبلیشر سنٹر یے۔ یہاں آپ پاکستانی خبریں، انٹرنیشنل خبریں، ٹیکنالوجی، شوبز، اسلام، سیاست، اور بھی بہیت کہچھ پڑھ سکتے ہیں۔

مزیز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button