بائیڈن نے ریفرنڈم کے لیے روس پر مزید ‘تیز اور شدید اقتصادی اخراجات’ عائد کرنے کا عہد کیا۔

>Urdupoint_2

انادولو

11:16 AM | 25 ستمبر 2022

ماسکو کی جانب سے یوکرین میں ریفرنڈم کے اعلان کے بعد امریکی صدر جو بائیڈن نے جمعہ کو روس پر اضافی پابندیاں عائد کرنے کا عزم ظاہر کیا۔

بائیڈن نے کہا کہ امریکہ کبھی بھی یوکرین کے علاقے کو یوکرین کے حصے کے علاوہ کسی اور چیز کے طور پر تسلیم نہیں کرے گا اور اس نے روس کے ریفرنڈا کو "ایک دھوکہ – یوکرین کے کچھ حصوں کو طاقت کے ذریعے ضم کرنے کی کوشش کرنے کا ایک جھوٹا بہانہ” قرار دیا۔

انہوں نے ایک بیان میں کہا کہ "ہم اپنے اتحادیوں اور شراکت داروں کے ساتھ مل کر روس پر اضافی تیز اور شدید اقتصادی اخراجات عائد کرنے کے لیے کام کریں گے۔”

انہوں نے کہا کہ "امریکہ دنیا بھر میں اپنے شراکت داروں کے ساتھ کھڑا ہے – اور ہر اس قوم کے ساتھ جو اقوام متحدہ کے چارٹر کے بنیادی اصولوں کا احترام کرتی ہے – روس کی طرف سے جو بھی من گھڑت نتائج کا اعلان کرے گا اسے مسترد کرتے ہوئے”۔

بائیڈن نے اس عزم کا بھی اظہار کیا کہ وہ روس کی جنگ کے دوران یوکرین کو سکیورٹی امداد فراہم کرتے رہیں گے۔

علیحدگی پسندوں کے زیر کنٹرول لوہانسک اور ڈونیٹسک کے ساتھ ساتھ کھیرسن اور زاپوریزہیا، جو جزوی طور پر روسی کنٹرول میں ہیں، نے اس ہفتے کے شروع میں ریفرنڈم کے منصوبوں کا اعلان کیا۔

اس فیصلے کی عالمی برادری کی طرف سے بڑے پیمانے پر مذمت کی گئی ہے، یورپی ریاستوں اور امریکہ نے انہیں "شیم” ریفرنڈم قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ انہیں تسلیم نہیں کیا جائے گا۔

لوہانسک، ڈونیٹسک، کھیرسن اور زاپوریزہیا میں جمعہ سے منگل تک ووٹنگ ہوگی، جس میں ووٹرز سے کہا گیا ہے کہ وہ یہ فیصلہ کریں کہ آیا وہ خطے روس کا حصہ بننا چاہتے ہیں۔

اردو پوائنٹ 2

اردو پوائنٹ 2 پاکستان کو بہترین نیوز پبلیشر سنٹر یے۔ یہاں آپ پاکستانی خبریں، انٹرنیشنل خبریں، ٹیکنالوجی، شوبز، اسلام، سیاست، اور بھی بہیت کہچھ پڑھ سکتے ہیں۔

مزیز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button