جڑواں شہروں میں ڈینگی پھیل گیا، ایک ہی دن میں 180 نئے کیسز سامنے آئے

اکتوبر میں ڈینگی پھیلنے کا امکان

اکتوبر کے مہینے میں ڈینگی وائرس کے پھیلاؤ میں شدت آنے کی توقع ہے کیونکہ راولپنڈی کے اسپتالوں میں ویکٹر سے پیدا ہونے والی بیماری میں مبتلا مریضوں کی آمد کا سلسلہ جاری ہے۔ گزشتہ 24 گھنٹوں میں 78 شہری ڈینگی بخار کا شکار ہو گئے۔

شہر کے تینوں ہسپتالوں میں اس وقت ڈینگی کے 64 مریض ہیں جن میں سے 64 فیصد مریضوں کا تعلق گیریژن سٹی جبکہ 36 فیصد کا تعلق اسلام آباد اور دیگر علاقوں سے ہے۔ ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ سروسز پنجاب کی مانیٹرنگ ٹیم نے ہسپتالوں اور مختلف علاقوں کا دورہ کیا۔

شہر کے تین اسپتالوں میں 404 بستروں پر 219 مریض زیر علاج ہیں۔ بینظیر بھٹو جنرل ہسپتال میں 100، ہولی فیملی ہسپتال میں 66 اور ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال میں 55 مریض زیر علاج ہیں۔ تین ہسپتالوں میں ڈینگی وائرس کے مثبت مریضوں کی تعداد 139 تک پہنچ گئی ہے جبکہ رواں سیزن میں اب تک ڈینگی کے 1690 مریض رپورٹ ہو چکے ہیں۔ دریں اثناء اسلام آباد سے ڈینگی کے 46 مریض اس وقت راولپنڈی کے ہسپتالوں میں داخل ہیں۔

ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ سروسز پنجاب ڈاکٹر ہارون جہانگیر کی طرف سے تشکیل دی گئی چار ڈاکٹروں کی ٹیم جس میں ڈاکٹر عمران بشیر، ڈاکٹر محسن وٹو، ڈاکٹر علی رضا اور ڈاکٹر شہزاد شامل ہیں نے ہولی فیملی ہسپتال اور بے نظیر بھٹو جنرل ہسپتال کے ڈینگی وارڈز کا دورہ کیا۔ ٹیم نے ضلع سے باہر مریضوں کی تعداد اور مریضوں کے رہائشی علاقوں میں سپرے کرنے کے بارے میں دریافت کیا۔ ٹیم نے ڈینگی کے حوالے سے ہائی رسک علاقوں میں انسداد ڈینگی مہم کو مزید بہتر بنانے کی بھی ہدایت کی۔

ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹی کے چیف ایگزیکٹو ڈاکٹر اسحاق نے کہا کہ انسداد ڈینگی مہم کو تیز کر دیا گیا ہے۔ اس وقت ڈینگی کے مریضوں کی اکثریت کا تعلق پوٹھوہار ٹاؤن اور کنٹونمنٹ کے علاقوں سے ہے جہاں ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹی کی ٹیمیں پوری طرح متحرک ہیں اور لاروا کا پتہ لگانے اور تلف کرنے کے لیے فوگنگ، سپرے اور ڈینگی سرویلنس کا کام جاری ہے۔ ٹیمیں مانیٹرنگ رپورٹ سفارشات کے ساتھ وزیر صحت اور ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ پنجاب کو پیش کریں گی۔

دریں اثناء راولپنڈی کے تینوں ہسپتالوں میں مفت ڈینگی ٹیسٹ اور علاج کی سہولتوں کی فراہمی کے ساتھ ساتھ مریضوں کے لواحقین کے لیے ڈینگی آگاہی اور ڈینگی سے بچاؤ کے حوالے سے تربیتی سیشنز کا آغاز کر دیا گیا ہے۔ ہولی فیملی ہسپتال اور بے نظیر بھٹو جنرل ہسپتال کے ڈینگی وارڈز کا دورہ کرنے والی مانیٹرنگ ٹیم کو بتایا گیا کہ 2019 کے بعد خدشہ ہے کہ رواں سال کے دوران 9 اکتوبر سے 25 اکتوبر تک یہ وبا اپنے عروج پر پہنچ سکتی ہے جس میں ڈینگی کے مریضوں کی تعداد مریضوں میں غیر معمولی اضافہ ہوسکتا ہے.

دریں اثناء ڈینگی وائرس کے کیسز میں خطرناک حد تک اضافے کے پیش نظر ڈپٹی کمشنر طاہر فاروق نے ضلع بھر میں ضلعی انتظامیہ کی زیر نگرانی تمام سرکاری اداروں کے ملازمین اور افسران کی اتوار سمیت تمام قسم کی چھٹیاں منسوخ کر دی ہیں۔

راولپنڈی میں اس وباء کے پھیلنے کے امکان نے صحت کی دیکھ بھال کرنے والے پیشہ ور افراد کو 1 سے 31 اکتوبر کے دورانیے کو خاص طور پر خطرناک قرار دیا ہے۔ جس کے نتیجے میں ڈپٹی کمشنر نے تمام ملازمین کی چھٹیاں منسوخ کر دی ہیں۔ مزید برآں وارننگ جاری کی گئی ہے کہ اگر کوئی ملازم غیر حاضر پایا گیا تو اس کے خلاف سخت تادیبی کارروائی کی جائے گی۔

اردو پوائنٹ 2

اردو پوائنٹ 2 پاکستان کو بہترین نیوز پبلیشر سنٹر یے۔ یہاں آپ پاکستانی خبریں، انٹرنیشنل خبریں، ٹیکنالوجی، شوبز، اسلام، سیاست، اور بھی بہیت کہچھ پڑھ سکتے ہیں۔

مزیز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button