توہین عدالت کیس میں عمران خان نے بیان حلفی جمع کرادیا۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج زیبا چوہدری کو دھمکیاں دینے پر اپنے خلاف توہین عدالت کیس میں حلف نامہ جمع کرا دیا۔

تفصیلات کے مطابق سابق وزیراعظم نے ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج زیبا چوہدری کے خلاف متنازعہ ریمارکس دینے پر توہین عدالت کیس میں اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) میں اپنا بیان حلفی جمع کرا دیا۔

اپنے حلف نامے میں عمران خان نے گزشتہ سماعت میں اسلام آباد ہائی کورٹ (IHC) کے سامنے 22 ستمبر کو دیے گئے بیان کی تعمیل کرنے کا عزم کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ "اگر ججوں کو لگتا ہے کہ میں نے سرخ لکیر عبور کی ہے تو میں معافی مانگنے کے لیے تیار ہوں۔”

پی ٹی آئی چیئرمین نے کہا کہ میرا مقصد خاتون جج کو دھمکی دینا نہیں تھا۔ ایکشن لینے کا مطلب قانونی کارروائی کے سوا کچھ نہیں۔

واضح رہے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ نے عمران خان کے خلاف توہین عدالت کیس میں فرد جرم عائد نہ کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

تفصیلات کے مطابق سابق وزیراعظم کی جانب سے سیشن جج زیبا چوہدری سے معافی مانگنے پر رضامندی ظاہر کرنے کے بعد اسلام آباد ہائی کورٹ نے عمران خان کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی موخر کردی۔

سابق وزیر اعظم نے نوٹ کیا کہ ان کا مقصد خاتون جج کو دھمکی دینا نہیں تھا۔ "عدالت نے ایسا کہا، میں ذاتی طور پر جج کے پاس جا کر معافی مانگنے کے لیے تیار ہوں،” انہوں نے کہا، انہوں نے مزید کہا کہ وہ مستقبل میں ایسا کچھ نہیں دہرائیں گے۔

جس کے بعد اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ توہین عدالت کی کارروائی کرنا مناسب نہیں ہوگا۔ عدالت نے عمران خان کو اپنے بیان کی روشنی میں بیان حلفی جمع کرانے کی ہدایت کی۔

اردو پوائنٹ 2

اردو پوائنٹ 2 پاکستان کو بہترین نیوز پبلیشر سنٹر یے۔ یہاں آپ پاکستانی خبریں، انٹرنیشنل خبریں، ٹیکنالوجی، شوبز، اسلام، سیاست، اور بھی بہیت کہچھ پڑھ سکتے ہیں۔

مزیز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button