عدالت نے منی لانڈرنگ کیس میں وزیر اعظم شہباز اور حمزہ کی بریت کی درخواستوں پر فیصلہ محفوظ کر لیا

لاہور کی خصوصی عدالت نے بدھ کو وزیر اعظم شہباز شریف کے صاحبزادے حمزہ شہباز کی لانڈرنگ کیس میں بریت کی درخواستوں پر سماعت کرتے ہوئے فیصلہ محفوظ کر لیا۔

فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) نے نومبر 2020 میں شہباز اور ان کے دو بیٹوں حمزہ اور سلیمان کے خلاف انسداد بدعنوانی ایکٹ کی دفعہ 419، 420، 468، 471، 34 اور 109 کے تحت مقدمہ درج کیا تھا۔ – منی لانڈرنگ ایکٹ۔

مقدمے کی کارروائی میں مسلسل غیر حاضری پر عدالت نے سلیمان کو اشتہاری مجرم قرار دیا تھا۔

منگل کو ایف آئی اے نے عدالت کو بتایا تھا کہ وزیراعظم شہباز شریف اور ان کے بیٹے کے بینک اکاؤنٹس میں بے نامی اکاؤنٹس سے براہ راست کوئی لین دین نہیں ہوا۔

آج سماعت کے آغاز پر وزیراعظم شہباز شریف اور سابق وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ کی نمائندگی کرنے والے ایڈووکیٹ امجد پرویز نے عدالت سے استدعا کی کہ وزیراعظم کی ناگزیر سرکاری مصروفیات کے باعث انہیں سماعت سے ایک اور استثنیٰ دیا جائے۔

ایف آئی اے نے دسمبر 2021 میں شہباز اور حمزہ کے خلاف شوگر اسکینڈل کیس میں 16 ارب روپے کی لانڈرنگ میں مبینہ طور پر ملوث ہونے پر خصوصی عدالت میں چالان جمع کرایا تھا۔

اردو پوائنٹ 2

اردو پوائنٹ 2 پاکستان کو بہترین نیوز پبلیشر سنٹر یے۔ یہاں آپ پاکستانی خبریں، انٹرنیشنل خبریں، ٹیکنالوجی، شوبز، اسلام، سیاست، اور بھی بہیت کہچھ پڑھ سکتے ہیں۔

مزیز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button