جج کے خلاف ریمارکس کیس میں عمران خان کی ضمانت ہو گئی۔

اسلام آباد کی ایک ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے خاتون جج کو دھمکیاں دینے کے کیس میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان کی جمعرات کو ضمانت منظور کر لی۔

عمران خان کی ذاتی طور پر عدالت میں پیشی کے بعد ضمانت منظور کی گئی۔

سماعت کے دوران عمران خان کے وکیل بابر اعوان نے عدالت کو بتایا کہ تھانہ مارگلہ میں دفعہ 144 کی خلاف ورزی اور خاتون جج کو دھمکیاں دینے کا مقدمہ درج کیا گیا تھا جسے اسلام آباد ہائی کورٹ نے کالعدم قرار دے دیا تھا۔

شہباز گل کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا، جس پر عمران خان نے کہا کہ آئی جی اور ڈی آئی جی نہیں چھوڑیں گے، مقدمہ درج کریں گے۔

پراسیکیوٹر واجد منیر نے اعتراض کیا کہ ”عمران خان نے سرکاری ملازمین کو دھمکیاں دیں؟“ جج نے استفسار کیا کہ جلسہ کہاں ہو رہا تھا؟ پراسیکیوٹر نے جواب دیا F9 پارک۔

عدالت نے ریمارکس دیئے کہ ایف نائن پارک میں عوامی اجتماع ہو رہا تھا تو دفعہ 144 کیسے لگائی جب کہ خان کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

عدالت نے عمران کو آئندہ سماعت پر متعلقہ عدالت میں پیش ہونے کی ہدایت کا اعادہ کرتے ہوئے ان کی ضمانت منظور کر لی۔

بعد ازاں عدالت نے 50 ہزار روپے کے مچلکوں کے عوض خان کی درخواست ضمانت منظور کر لی۔

اردو پوائنٹ 2

اردو پوائنٹ 2 پاکستان کو بہترین نیوز پبلیشر سنٹر یے۔ یہاں آپ پاکستانی خبریں، انٹرنیشنل خبریں، ٹیکنالوجی، شوبز، اسلام، سیاست، اور بھی بہیت کہچھ پڑھ سکتے ہیں۔

مزیز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button