ملک بھر میں بجلی کی ترسیل کا نظام بحال، وزارت کا دعویٰ

ملک بھر میں بجلی کی فراہمی مکمل طور پر بحال کر دی گئی ہے۔  تصویر: Twitter/@MoWP15
ملک بھر میں بجلی کی فراہمی مکمل طور پر بحال کر دی گئی ہے۔ تصویر: Twitter/@MoWP15

اسلام آباد: وزارت توانائی نے جمعرات کو دعویٰ کیا کہ ایک اہم پیشرفت میں، ملک بھر میں بجلی کی ترسیل کا نظام مکمل طور پر بحال کر دیا گیا ہے۔

سندھ، بلوچستان اور پنجاب کے کچھ حصوں میں آج صبح بجلی کی بڑی بندش دیکھی گئی کیونکہ ملک کے جنوبی بجلی کے ترسیلی نظام میں "حادثاتی خرابی” کی وجہ سے کئی علاقوں میں بجلی کی فراہمی معطل ہوگئی۔

ٹویٹر پر لے کر، وزارت نے کہا کہ متبادل پاور پلانٹس سے بجلی کی فراہمی میں اضافہ کیا جا رہا ہے جو جمعہ کی صبح تک معمول پر آجائے گا۔

تاہم وزارت کے بیان کے برعکس بجلی بحال نہیں کی گئی کیونکہ ذرائع نے جیو نیوز کو بتایا کہ تربیلا ڈیم سے بجلی کی سپلائی معطل کر دی گئی ہے۔

کراچی میں مرحلہ وار بجلی کی بحالی کا سلسلہ جاری ہے۔

ایک بیان میں کے الیکٹرک کے ترجمان نے کہا کہ بندرگاہی شہر میں مرحلہ وار بجلی کی فراہمی بحال کی جا رہی ہے۔

ترجمان نے ایک بیان میں کہا، "وزارت توانائی کی رپورٹ کے مطابق اس وقت پاکستان کے متعدد شہر قومی ٹرانسمیشن نیٹ ورک میں خرابی کے باعث متاثر ہیں۔”

ترجمان نے مزید کہا کہ ہوائی اڈے، ہسپتالوں اور KWSB پمپنگ سٹیشنوں سمیت اسٹریٹجک تنصیبات کو بجلی کی فراہمی بحال کر دی گئی ہے۔

رہائشی علاقوں میں بجلی کی فراہمی کی بحالی بتدریج جاری ہے، بجلی سپلائی کمپنی نے کہا کہ ایف بی ایریا اور گزری کے کچھ حصے بشمول آغا خان، سوک سینٹر، کلفٹن، ڈیفنس، دھابیجی اور ایلینڈر روڈ کے ساتھ ساتھ گلستانِ ارض کے بڑے حصے۔ جوہر، لیاقت آباد، لیاری اور ملیر اور دیگر کو بحال کر دیا گیا ہے۔

کے الیکٹرک کا جنریشن، ٹرانسمیشن اور ڈسٹری بیوشن نیٹ ورک محفوظ اور مکمل طور پر فعال ہے، جس سے بحالی کی کوششیں بتدریج آگے بڑھ رہی ہیں، بیان پڑھیں۔

‘حادثاتی خرابیاں’

اس سے قبل وفاقی وزیر برائے توانائی خرم دستگیر خان نے پاکستانیوں کو عشاء کی نماز تک بجلی کی فراہمی کی مکمل بحالی کی یقین دہانی کرائی تھی۔

خان نے اسلام آباد میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا، "ہم مغرب اور عشاء کے درمیان نظام کو بحال کریں گے۔” انہوں نے قوم کو بتایا کہ معاملے کی تحقیقات کے لیے ایک انکوائری ٹیم تشکیل دی گئی ہے، جو پانچ دن میں اپنی رپورٹ پیش کرے گی۔

وزیر نے صحافیوں کو بتایا کہ بریک ڈاؤن کی وجہ سے 8000 میگاواٹ کا شارٹ فال سامنے آیا تاہم کم از کم 4700 میگاواٹ بجلی بحال ہو چکی ہے۔

انہوں نے کہا کہ فیصل آباد اور ملتان کے علاقوں کو مکمل طور پر بحال کر دیا گیا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ سکھر الیکٹرک سپلائی کمپنی (سیپکو) کی سپلائی جزوی طور پر بحال کر دی گئی ہے۔

خان نے کہا کہ ٹرپ ہونے والے پلانٹس کو بحال کرنے میں چند گھنٹے لگیں گے اور امید ہے کہ کراچی کو بجلی فراہم کرنے والے پلانٹس بھی بحال ہو جائیں گے۔

خان نے کہا، "کوئٹہ اور کراچی میں بجلی بحال کرنے کی ضرورت ہے،” انہوں نے مزید کہا کہ ٹرپنگ جس سے بریک ڈاؤن ہوا وہ بندرگاہی شہر سے شروع ہوا اور ملک کے دیگر حصوں میں پھیل گیا۔

اس سے قبل وفاقی وزارت توانائی نے جنوبی ٹرانسمیشن سسٹم میں ’حادثاتی خرابیوں‘ کی وجہ سے سندھ اور ملک کے دیگر حصوں میں بندش کی اطلاعات کی تصدیق کی تھی۔

وزارت نے ٹویٹ کیا، "جنوبی ٹرانسمیشن سسٹم میں حادثاتی خرابی کی وجہ سے کئی پاور پلانٹس لگاتار ٹرپ کر رہے ہیں، جو ملک کے جنوبی علاقوں میں بجلی کی فراہمی میں رکاوٹ بن رہی ہے۔”

اردو پوائنٹ 2

اردو پوائنٹ 2 پاکستان کو بہترین نیوز پبلیشر سنٹر یے۔ یہاں آپ پاکستانی خبریں، انٹرنیشنل خبریں، ٹیکنالوجی، شوبز، اسلام، سیاست، اور بھی بہیت کہچھ پڑھ سکتے ہیں۔

مزیز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button